44

وزیر اعلی اور سپیکر اکیلے ملوث نہیں ہو سکتے بلکہ ان کا پورا ٹبر ہی چور اور ارکان کی خرید وفروخت میں ملوث ہے سراج الحق

جماعت اسلامی پاکستان کے امیر سینیٹر سراج الحق نے سینیٹ کے انتخابات 2018 ء میں پیسے کی لین دین کی ویڈیو منظر عام پر آنے اور اس میں اس وقت کے وزیر اعلی خیبر پختونخواپرویز خٹک اور سپیکر اسد قیصر کے ملوث ہونے سے متعلق کہا ہے کہ ویڈیو میں پیسے لینے والے تو نظر آرہے ہیں لیکن جن لوگوں نے یہ رقم جمع کی اور رشوت کے طور پر ضمیر خریدےـ ان کے نام ابھی تک سامنے نہیں آئےـ وزیر اعلی اور سپیکر اکیلے ملوث نہیں ہو سکتے بلکہ ان کا پورا ٹبر ہی چور اور ارکان کی خرید وفروخت میں ملوث ہے ـ انہوں نے کہا کہ بجلی کی قیمت میں آج پھر اضافہ کر دیا گیا ـ مہنگائی میں 9.17 فیصد تک اضافہ کر دیا گیا ـ عوام کو ہر روز کرنٹ لگایا جاتا ہے ـ وزیر اعظم عمران خان نے پہلے 100 دن مانگے پھر 6 ماہ اور پھر ایک سال اب وہ اپنی ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے کہہ رہے ہیں کہ پانچ سال میں بھی مہنگائی ، کرپشن کا خاتمہ اور مسائل کا حل نہیں کیا جا سکتا ـ اللہ تعالی اس وقت کی حفاظت فرمائےـ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز منصورہ میں جماعت اسلامی کے زیر اہتمام فی سبیل اللہ فنڈ مہم کے افتتاح کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیاـ قبل ازیں انہوں نے فی سبیل اللہ فنڈ جمع کر وا کر مہم کا آغاز کیا ـ اس موقع پر جماعت اسلامی کے نائب امیر لیاقت بلوچ، اسلم اقبال اور دیگر رہنما بھی موجود تھےـ سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ یہ مہم پاکستان کے طول وعرض میں دو ماہ تک جاری رہے گیـ انہوں نے کہا کہ 73 سال قبل برصغیر کے مسلمانوں نے قائد اعظم محمد علی جناح کے قیادت میں آزاد پاکستان حاصل کیا جس کے لئے لوگوں نے لاکھوں قربانیاں دیں اور عصمتوں کی بھی پامالی کی گئی لیکن ابھی تک قیام پاکستان کے مقاصد حاصل نہیں کئے جا سکےـ جماعت اسلامی کی جدوجہد کا مقصد پاکستان کو اسلامی فلاحی مملکت بنانا ہے ـ انہوں نے قوم سے اپیل کی کہ وہ نہ صرف فی سبیل اللہ فنڈ دیں بلکہ جماعت اسلامی کو ووٹ اور نوٹ دونوں سے نوازیں ـ جماعت اسلامی عوام کا ایک ایک پیسہ فلاحی اور نیک مقاصد کے لئے استعمال کرتی ہے جس کی پوری قوم گواہ ہے ـ انہوںنے کہا کہ 73 سال کے دوران قوم نے تمام جماعتوں کو آزما لیا لیکن یہ جماعتیں نہ تو پاکستان کی سالمیت کا دفاع کر سکی اور نہ ہی نظریہ کا ـ انہوںنے کہا کہ جماعت اسلامی ہی ایسی جماعت ہے جس کے پاس اہل ، تجربہ کار اور دیانتدار قیادت اور ٹیم موجود ہے جو پاکستان کو حقیقی معنوں میں اسلامی فلاح مملکت بنائے گیـ اسلامی فلاحی مملکت کے قیام کے بعد ہی بے روزگاری اور مہنگائی سمیت تمام مسائل حل ہو سکتے ہیں ـ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں