61

کراچی کے سینئر رپورٹر احتشام مفتی پر اے ایس آئی کا تشدد، وزیر اعلی سندھ کی آئی جی پولیس کو انکوائری کی ہدایت صحافی کو انصاف فراہم کیا جائیگا انکوائری کے بعد متعلقہ پولیس افسر کے خلاف قانونی کارروائی کی جائیگی۔ وزیراعلی سندھ

ایکسپریس نیوز کے سینئر رپورٹر احتشام مفتی پر اے ایس آئی کا تشدد،

وزیر اعلی سندھ کی آئی جی پولیس کو انکوائری کی ہدایت

سینیئر صحافی کو انصاف فراہم کیا جائیگا۔مراد علی شاہ

انکوائری کے بعد متعلقہ پولیس افسر کے خلاف قانونی کارروائی کی جائیگی۔ وزیراعلی سندھ

احتشام مفتی پر تشدد کرنے والا اے ایس آئی معطل۔ ایس پی نیو کراچی انکوائری کرکے چوبیس گھنٹے میں رپورٹ دے گا۔ ایس ایس پی سنٹرل نے رپورٹ ایڈیشنل آئی جی کو ارسال کردی۔

کراچی یونین آف جرنلسٹس کی جانب سے سینئر رکن اور معروف صحافی احتشام مفتی پر نیو کراچی میں پولیس تشدد کی کے یو جے نے سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔ ایڈیشنل آئی جی کراچی سے مطالبہ ہوا ہے کہ تشدد میں ملوث بد مست پولیس افسر اور اہلکاروں کے خلاف فوری کاروائی کی جائے۔ کے یو جے کے صدر اعجاز احمد جنرل سیکریٹری عاجز جمالی اور ایگزیکٹو کونسل کے تمام ارکان نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ روزنامہ ایکسپریس سے وابستہ سینئر صحافی کے یو جے اور کراچی پریس کلب کے سینئر رکن احتشام مفتی اپنے ڈرائیور کے ہمراہ نیو کراچی میں سفر کر رہے تھے کہ بلال کالونی تھانہ کے بد مست اے ایس آئی دل نواز نے رکنے کا اشارہ کیا اور آگے چل کر جونہی ڈرائیور نے گاڑی روکی تو اے ایس آئی دل نواز اور اہلکاروں نے احتشام مفتی اور ڈرائیور پر تشدد کرنا شروع کردیا اور ان کو بلال کالونی تھانہ لے گئے۔سینئر صحافی کی جانب سے تعارف کرانے کے باوجود پولیس ان پر تشدد کرتی رہی۔ کے یو جے نے اس واقعے پر شدید احتجاج کرتے ہوئے ملزمان کے خلاف فوری کاروائی کا مطالبہ کیا اور کہا کہ بدمست پولیس اہلکاروں کے خلاف کاروائی نہیں ہوئی تو کے یو جے کی جانب سے پولیس کے خلاف احتجاج کیا جائے گا۔ کے یو جے نے حکومت سندھ سے بھی مطالبہ کیا ہے کہ کراچی میں پولیس کی جانب سے صحافیوں کے خلاف ہونے والی کاروائیوں پر نوٹس لیا جائے کیونکہ جب سے سندھ جرنلسٹس پروٹیکشن بل منظور ہوا ہے تب سے تشدد کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے جو نہایت افسوس ناک ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں