17

ممبر قانون ساز اسمبلی اور تحریک انصاف کے ٹکٹ ہولڈر صغیر خان چغتائی کی نماز جنازہ 21جون بروز پیر چار بجے شام صابر شہید سٹیڈیم ر اولاکوٹ شہر میں ادا کی جائے گی

راولاکوٹ (آصف اشرف)
ممبر قانون ساز اسمبلی اور تحریک انصاف کے ٹکٹ ہولڈر صغیر خان چغتائی کی نماز جنازہ 21جون بروز پیر چار بجے شام صابر شہید سٹیڈیم ر اولاکوٹ شہر میں ادا کی جائے گی بعد ازاں ساڈھے پانچ بجےآبائی گاؤں بنگوئیں میں ادا کی جائے گی جس کے بعد صغیر چغتائی کو بنگوئیں کے آبائی قبرستان میں سپرد خاک کیا جائے گا۔ جبکہ ڈرائیور محمد سعید خان مغل کی نماز جنازہ کے بعد انہیں آبائی گاؤں نعمان پورہ باغ میں سپرد خاک کیا جائے گا سعید مغل کی نمازہ جنازہ آبائی گاؤں میں دوبارہ ادا کی جائے گی۔ صغیر خان چغتائی کی میت کی شناخت ان کے بیٹے نے ان کے دانتوں سے اور ڈرائیو سعید خان مغل کی میت کی شناخت اس ہاتھ میں موجود انگوٹھی سے کی گئی ہفتہ کے روز دونوں میتیں منگلا ڈیم سے ملیں تین دن قبل اس حادثہ میں جاں بحق ہونے والے صغیر چغتائی کے پرسنل سیکرٹری راجہ احتشام سعید کیانی کی لاش دھان گلی ڈڈیال سے ملی تھی۔صغیر چغتائی کو حادثہ گزشتہ جمعہ کی صبح اس وقت پیش آیا تھا جب وہ اپنے ڈرائیور پرسنل سیکرٹری کے ہمراہ راولپنڈی کی طرف جا رہے تھے کہ پاکستان اور آزاد کشمیر کو ملانے والی سرحد پر واقع آزاد پتن پل سے ان کی گاڑی اور سامنے سے آنے والی ایک گاڑی دریا جہلم میں جا گری تھیں۔ ہیلی کاپٹر اور نیوی کے غوطہ خوروں کے ساتھ جماعت الدعوۃ کے غوطہ خوروں سمیت مختلف لوگوں نے بھاری بھر اخراجات کے ساتھ دریا برد ہونے والوں کی تلاش کی لیکن کسی کو بھی کامیابی حاصل نہ ہو سکی پہلے پرسنل سیکرٹری احتشام سعید کی لاش ایک کشتی بان کو ملی اور اب صغیر چغتائی اور ان کے ڈرائیور محمد سعید کی لاش ایک ساتھ منگلہ سے ملیں تا ہم لاشیں ایک ہفتہ تک پانی میں رہنے کے باعث پچاننے میں رکاوٹ تھی جس کو صغیر چغتائی کے بیٹے نے شناخت کیا ڈرائیور محمد سعید خان کا تعلق نعمان پورہ باغ سے تھا اس کے باپ نے دوسری شادی کر رکھی تھی وہ اپنی ماہ کے ساتھ راولپنڈی میں کرائے کے مکان میں رہائش پذیر تھا۔دو روز قبل اس کی ماں کو یہ درد ناک اطلاع ملی کے اس کے بیٹے کے ساتھ یہ حادثہ پیش آ چکا ہے اس کی ماں یہ سمجھتی رہی کہ وہ صغیر چغتائی کے ساتھ ڈیوٹی پر ہے ایک ہفتہ سے صغیر چغتائی کا خاندان سوگ میں ڈوبا ہوا ہے صغیر چغتائی کے بڑے بھائی اور تنویر الیاس چغتائی کے والد الیاس خان چغتائی نے سعودی عر ب سے واپسی پر ان لاشوں کی تلاش کرنے والے کے لیے 5کروڑ روپے کے انعام کا اعلان کر رکھا تھا نیوی اور غوطہ خوروں کی طرف سے دریا برد افراد کی تلا ش میں ناکامی کے بعد الیاس چغتائی نے امریکہ سے جدید ٹیکنالوجی بھی منگوائی ہوئی تھی لیکن قدرت نے اپنا کام دکھایا اور گزشتہ روز اچانک منگلہ جھیل سے دونوں لاش مل گئیں۔ ان لاشوں کے ملنے کے بعد صغیر چغتائی اور سعید خان کے گھروں میں ایک مرتبہ پھر صف ماتم بھچ گئی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں