22

اقوام متحدہ میں پاکستان کےنوجوانوں کی قیادت کرنےوالےپاکستان کےکم عمرسیاستدان ملک اذان اعوان جھوٹےمقدمہ سے باعزت بری

اٹک () اقوام متحدہ میں پاکستان کے نوجوانوں کی قیادت کرنے والے پاکستان کے کم عمر ترین سیاستدان ملک اذان اعوان کو تھانہ اٹک سٹی میں درج جھوٹے مقدمہ میں عدالت نے مکمل سماعت کے بعد باعزت بری کر دیا یہ بات ملک اذان اعوان نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہی انہوں نے کہا کہ 8 فروری کو سینئر نائب صدر مسلم لیگ ( ن ) پنجاب سابق وفاقی وزیر شیخ آفتاب احمد کی اہلیہ کی اٹک تین میلہ روڈ پر واقع برلب سڑک بلڈنگ کو ضلعی انتظامیہ ، پولیس ، بلدیہ اٹک کے افسران کی مدد سے تجاوز قرار دے کر مسمار کرنے کیلئے بھاری مشینری کے ساتھ موجود تھی مسلم لیگ ( ن ) کے کارکنان نے روڈ بھی بلاک کیا ہوا تھا اڑھائی بجے دن وہ اس غیر قانونی اقدام کی دوسرے مسلم لیگی رہنماءوں اور کارکنوں کی طرح مذمت کرنے گئے تھے کیونکہ پارٹی کے بزرگ رہنما کی اہلیہ کے پلازہ کو مسمار کرنے کی تمام تیاریاں مکمل تھیں حکومت کی اس انتقامی کاروائی پر انہوں نے میڈیا سے باقاعدہ بات چیت کرتے ہوئے اس اقدام کو خالصتاً انتقامی قرار دیا اس وقت کے ڈپٹی کمشنر ، وزیر اعظم عمران خان اور دیگر کے خلاف سخت زبان میں مذمت کی جس پر وہاں موجود اے ایس پی جواد اسحاق اور اس وقت کے ایس ایچ او اور دیگر پولیس اہلکار فوری طور پر آ گئے اور کہا کہ آپ کو گرفتار کیا جاتا ہے اور مجھے بلا وجہ کسی غیر قانونی اقدام کے تھانہ میں لا کر ایف آئی آر درج کرنے کے بعد حوالات میں بند کر دیا بعدازاں ان کے والد وائس چیئرمین بلدیہ ملک طاہر اعوان جو اس حلقہ پی پی ون اٹک سے مسلم لیگ ( ن ) کے امیدوار ہیں کے سیاسی مخالفین اور بعض ضمیر فروش صحافیوں نے سوشل میڈیا اور پرنٹ میڈیا پر ان کی حوالات کی تصاویر شیئر اور شاءع کیں مجھ پر جو جھوٹی ، بے بنیاد اور حقائق کے منافی ایف آئی آر درج کی جس میں نہ صرف قانون بلکہ موقع پر موجود میڈیا اور مسلم لیگ ( ن ) کے رہنماءوں اور کارکنوں جن کی تعداد سینکڑوں میں تھی کی آنکھوں میں دھول جھونکتے ہوئے یہ تحریر کیا گیا کہ میں نے وہاں آ کر اپنا تعارف پولیس افسر کے طور پر کرایا ہے اور گاڑی پر پولیس کا فلیشر لگا ہوا تھا فاضل عدالت نے مقدمہ کی تفصیلی سماعت کے بعد اٹک پولیس کی جانب سے ان کے خلاف لگائے جانے والے تمام الزامات کو جھوٹا ، بے بنیاد اور حقائق کے منافی قرار دیتے ہوئے انہیں باعزت بری کر کے حق اور سچ کا جو فیصلہ دیا ہے اس سے نہ صرف وہ فاضل عدالت کے مشکور ہیں بلکہ معاشرے میں اس فیصلہ سے لوگوں کا عدلیہ پر اعتماد مزید پختہ اور بحال ہوا ہے عدالت کے اس تاریخی اور باوقار فیصلہ نے نہ صرف انہیں سرخرو کیا ہے بلکہ ان کے والد ملک طاہر اعوان جو دن رات عوامی خدمت کیلئے حدیث مبارکہ ’’ بہترین جہاد جابر سلطان کے سامنے کلمہ حق کہنا ہے ‘‘ پر عمل پیرا ہیں اور جو لوگ ان سے خوفزدہ ہیں وہ اپنا خوف سنبھال کر رکھیں آئندہ عام انتخابات میں یہی خوف ان کی ضمانتیں ضبط کرانے کا سبب بنے گا وہ ، اور ان کے والد اور دیگر اہلخانہ پر مزید 10 ایف آئی آرز درج ہوں تو حق کے راستے پر چلنے کا یہ سفر جاری و ساری رہے گا جن ضمیر فروش صحافیوں نے اپنے ذاتی بغض اور عناد کے سبب ان کی کردار کشی کیلئے صحافت جو ’’ پیشہ پیغمبری ‘‘ ہے کو استعمال کیا ان کے خلاف پانچ پانچ کروڑ روپے حرجانے کے نوٹس بھیج دیئے تھے ہفتہ کے روز دعویٰ دلاپانے پانچ پانچ کروڑ روپے دائر کر دیئے جائیں گے اور سیشن جج کی عدالت میں فوجداری استغاثہ دائر کر دیا جائے گا ان کو سخت سے سخت سزا دلوانا ہمارا مشن ہے کرپشن میں ملوث ان کے سیاسی مخالفین جن کی کرپشن کی داستانوں کے قصے وزیر اعظم اور وزیر اعلیٰ تک موجود ہیں وہ اپنی کرپشن چھپانے کیلئے ہم پر ایسے درجنوں کیس بھی بنوا دیں تو بھی ان کی کرپشن کو بے نقاب کرنے کا فریضہ ان کے والد ملک طاہر اعوان نے پہلے بھی کیا ہے اور آئندہ بھی اس پر عمل پیرا رہیں گے ان کے مخالفین مختلف ذراءع سے منت سماجت ، دھمکیاں دے کر یہ چاہتے ہیں کہ ملک طاہر اعوان ان کی چوریاں اور کرپشن بے نقاب نہ کریں تاہم یہ سلسلہ جاری رہے گا ملک طاہر اعوان نے ہمیشہ اٹک کی عوام کے حقوق کی آواز بلند کرنے کے علاوہ کرپشن کو جس طریقہ سے بے نقاب کیا ہے ضلع بھر میں اس کی نظیر نہیں ملتی عدالت سے ان کا باعزت بری ہونا اٹک میں مسلم لیگ ( ن ) کی کامیابی ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں