47

گیارہ سالہ اور تیرہ سالہ دوبچوں کے ساتھ زبردستی زیادتی کی کوشش کرنے کا جرم ثابت ہونے پر مجرم کو سات سال قید بامشقت اور ایک لاکھ روپے جرمانہ جبکہ پچاس پچاس ہزار روپے دونوں متاثرہ بچوں کو بطور عوضانہ کی ادائیگی کی سزا کا حکم

جرم ثابت ہونے پر مجرم کو سات سال قید بامشقت اور ایک لاکھ روپے جرمانہ

ڈیرہ اسماعیل خان جینڈر بیسڈ وائیلنس / چائلڈ پروٹیکشن کورٹ کے جج ایڈیشنل سیشن جج ڈیرہ محمد آصف نے تھانہ کینٹ کی حدود میں گیارہ سالہ اور تیرہ سالہ دوبچوں کے ساتھ زبردستی زیادتی کی کوشش کرنے کا جرم ثابت ہونے پر مجرم کو سات سال قید بامشقت اور ایک لاکھ روپے جرمانہ جبکہ پچاس پچاس ہزار روپے دونوں متاثرہ بچوں کو بطور عوضانہ کی ادائیگی کی سزا کا حکم جاری کردیا ،ملزم کی جانب سے سیف الرحمٰن ایڈوکیٹ عدالت میں پیش ہوئے ،استغاثہ کے مطابق مجرم زاہد ولد واحد بخش سکنہ بلال آباد مریالی پر الزام تھا کہ اس نے وقوعہ کے روز گیارہ سالہ اور تیرہ سالہ دو بچوں کو پتنگ دینے کے بہانے مقفل خالی حویلی میں لے گیا اور ان کے ساتھ زبردستی زیادتی کرنے کی کوشش کی ،متاثرہ بچوں کے اہل خانہ اور اہل محلہ بچوں کو تلاش کرتے ہوئے شورشرابے پر مذکورہ حویلی کے اندر داخل ہوئے جہاں مجرم نے حویلی کی دیوار پھلانگنے کوشش کی اور دیوار پر چڑھتے ہوئے گر کر زخمی ہوگیا جسے متاثرہ بچوں کے اہل خانہ اور دیگر اہل محلہ نے قابو کرکے کینٹ پولیس کے حوالے کیا جس نے مجرم کے خلاف جرم زیر دفعات 377/511 ت پ درج کر لیا ۔اس دوران مجرم ضمانت پر رہا ہوگیا ،مقدمہ کی باقاعدہ سماعت کے دوران استغاثہ کی جانب سے دس سے زائد گواہان اور شہادتیں عدالت میں پیش کی گئی ،عدالت نے دونوں جانب کے وکلاءکی بحث اور دلائل سننے کے بعد مقدمہ کی سماعت مکمل کرکے مجرم کے خلاف جرم ثابت ہونے پر اسے جرم زیر دفعہ چائلڈ پروٹیکشن ایکٹ کے تحت سات سال قید بامشقت اور ایک لاکھ روپے جرمانہ ،جرمانہ کی عدم ادائیگی پر چھ ماہ قید محض جبکہ پچاس پچاس ہزار روپے دونوں متاثرہ بچوں کی ادائیگی اور عدم ادائیگی پرمذید چھ ماہ قید محض کی سزا کے احکامات جاری کردیئے ہیں ۔ 

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں