24

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری اغواء کے کیس میں سزا یافتہ ملزمان کی اپیلوں پر سماعت عدالت نے تین ملزمان ہمت علی،عرض محمد اور سلیمان کی اپیلیں مسترد کردی

سپریم کورٹ کراچی رجسٹری

اغواء کے کیس میں سزا یافتہ ملزمان کی اپیلوں پر سماعت

عدالت نے تین ملزمان ہمت علی،عرض محمد اور سلیمان کی اپیلیں مسترد کردی

ملزمان پر شہری حاجی نور محمد مہر کو 2015 میں اغوا کرنے کا الزام ہے پولیس

پولیس نے مغوی کو پندرہ روز بعد مقابلے میں بازیاب کرانے کا دعوی کیا تھا وکیل ملزمان

پولیس مقابلے میں عرض محمد اور سلیمان زخمی ہوئے تھے، پولیس

ہمت علی نے خود پولیس حوالے کر دیا تھا ، پولیس

یہ جھوٹا پولیس مقابلہ ہے ملزمان ہے، وکیل امام بخش بلوچ

کیا پولیس کی ملزمان کے ساتھ دشمنی تھی ، عدالت کا استفسار

دونوں ملزمان کو ٹانگ میں گولی لگی ہے، وکیل درخواست گزار

پولیس کے جھوٹے مقابلے ہوتے رہتے ہیں ، امام بخش بلوچ ایڈووکیٹ

یہ اچھے اور برے کی صورتحال ہر جگہ ہے ، عدالت کے ریمارکس

ایک آدمی اغوا ہوا ہے وہ کہے رہا ہے کہ ان لوگوں نے اغوا کیا ہے، جسٹس قاضی امین کے ریمارکس

ملزمان کہے رہے ہیں ہم نے اغواء نہیں کی کسی اور نے انہیں اغوا کیا تھا، جسٹس قاضی امین

کورٹ رکھارڈ کو دیکھتی ہے اور ریکارڈ سے پولیس مقابلہ جعلی ثابت نہیں ہورہا، عدالت کے ریمارکس

ہمارے بچوں، مائوں بہنوں اور بیٹیوں کو محفوظ شاہراہیں اور گلیاں چاہئیں، جسٹس قاضی امین

معذرت کے ساتھ ہم ان شاہراہوں اور گلیاں کو محفوظ بنانے میں ناکام رہے ہیں ، جسٹس قاضی امین

انسداد دہشت گردی عدالت نے ملزمان کو عمر قید کی سزا سنائی تھی

ہائی کورٹ نے بھی ملزمان کی سزائیں برقرار رکھی تھیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں