29

قائد حزب اختلاف یوسف رضا گیلانی بن گئے بیان بازی احسن اقبال اور جماعت اسلامی کے دوسرے درجے کی قیادت میں شروع ہوگئی

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے سیکرٹری جنرل احسن اقبال کو امیر جماعت اسلامی پر تنقید کرنا مہنگا پڑ گیا
انہوں نے سماجی روابط کی ویب سائٹ ٹویٹر پر لکھا کہ‏سراج الحق صاحب نے بالآخر جماعت اسلامی کا پیپلز پارٹی سے الحاق کر دیا جبکہ وہ ڈسکہ الیکشن ، چئرمین اور ڈپٹی چئرمین سینٹ کے انتخاب میں غیر جانبدار رہنے کا اعلان کرتے رہے- دونوں کو نیا سفر مبارک ہو!

،مرکزی سیکرٹری اطلاعات جماعت اسلامی قیصر شریف نے ن لیگی رہنما کو آئینہ دکھاتے ہوئے ایسی بات کہہ دی کہ پیپلز پارٹی کی قیادت بھی دم بخود رہ جائے۔تفصیلات کے مطابق مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ پر اپنے طنزیہ ٹویٹ میں ن لیگی رہنما احسن اقبال نے کہا کہ “سراج الحق صاحب نے بالآخر جماعت اسلامی کا پیپلز پارٹی سے الحاق کر دیا جبکہ وہ ڈسکہ الیکشن ، چیئرمین اور ڈپٹی چیئرمین سینٹ کے انتخاب میں غیر جانبدار رہنے کا اعلان کرتے رہے، دونوں کو نیا سفر مبارک ہو!”۔احسن اقبال کے اس طنزیہ ٹویٹ کا فوری جواب دینے کیلئے جماعت اسلامی کے سیکرٹری اطلاعات قیصر شریف میدان میں آئے اورانہوں نے کہا کہ “یوسف رضا گیلانی کو سینیٹر آپ نے منتخب کروایا جماعت اسلامی نے نہیں،مریم نواز صاحبہ نے جلد یا بدیر فتح کی مبارک دی ہم نے نہیں،چیئرمین کے لیے ووٹ بھی ن لیگ نے دیا۔اب جماعت اسلامی کے لیے پریشان ہونے کی بجائے اپنے رویے میں یک دم تبدیلی سے سب کو آگاہ کیجیے پلیز”
ڈپٹی سیکرٹری جنرل جماعت اسلامی محمد اصغر نے کہا ہے کہ جماعت اسلامی ایک آزاد سیاسی جماعت ہے اس کا کسی کے ساتھ اتحاد یا الحاق نہیں ہوا۔ ملک میں جاری سیاسی کشمکش میں جماعت اسلامی پارلیمنٹ اور جمہوریت کے تسلسل اور استحکام کے لیے کام کرے گی، البتہ سیاسی جدوجہد اور انتخابات اپنے جھنڈے اور نشان پر لڑے گی۔ منصورہ سے جاری ایک بیان میں ان کا کہنا تھا کہ مسلم لیگ (ن) کے رہنما احسن اقبال پزل نہ ہوں۔ احسن اقبال کا امیر جماعت کے بارے میں بیان غیر جمہوری رویے کا عکاس ہے۔ انھوں نے سوال کیا کہ کیا مسلم لیگ (ن) کی اعلیٰ قیادت نے کبھی جماعت اسلامی سے تعاون نہیں لیا؟ کیا احسن اقبال سیاسی رواداری ختم کرنے کے قائل ہیں؟

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں