121

حیدرآباد میں نوجوان لڑکی کے ساتھ زیادتی کرنے والے نوجوانوں کو پکڑنے کے بچائے لڑکی کے باپ کو پولیس کی جانب سے ہراساں کرنے کا وزیر اطلاعات نے نوٹس لے لیا

‏سندھ کے قوم پرست رہنما ایاز لطیف پلیجو کے توجہ دلانے کے 24 گھنٹوں بعد سندھ کے وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے حیدرآباد کی مظلوم لڑکی کی تفصیلات مانگ لیں ناصر حسین شاہ نے مظلوم لڑکی سے معافی بھی مانگ لی ایاز لطیف پلیجو نے سماجی روابط کی ویب سائٹ ٹویٹر پر مطلوم بچی کی وڈیو بھی شئر کی ہے ” اس چھوٹی سی بچی کو محلے کے تين لڑکے کافی دن سے تنگ کررہے تھے، جب بچی کو پکڑ کر دوپٹہ کیھنچا گیا تو ٹھیلا لگانے والا غريب باپ شکایت لیکر لطيف آباد حيدرآباد کے تھانے پر گيا مگر غنڈوں کی گرفتاری کے بجاءِ الٹا باپ کو لاکپ میں بند کر ديا گیا ہے.
پوليس، انتظاميہ، ۡحکمران، عدالتيں؟ ”

سندھ کے وزیر اطلاعات سید ناصر حسین شاہ نے ایک دن بعد ٹویٹر پر کہا کہ “فوری کارروائی کرنے کی ہدایت کی۔ اگر آپ کو اس کے بارے میں مزید معلومات ہیں تو ، آپ مجھے براہ راست ڈی پی کرسکتے ہیں۔ میں ان بدمعاشوں سے ایسے سلوک کرنے پر اپنی بیٹی سے معافی چاہتا ہوں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں