48

اپوزیشن لیڈر سندھ اسمبلی حلیم عادل شیخ کوسندھ ہائیکورٹ سے ضمانت منظور ہونے پر رہا کردیا گیا۔

کراچی اپوزیشن لیڈر سندھ اسمبلی حلیم عادل شیخ کوسندھ ہائیکورٹ سے ضمانت منظور ہونے پر رہا کردیا گیا۔
حلیم عادل شیخ کو جناح اسپتال سے جیل حکام نے رہا کیا۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے مرکزی نائب صدر و قائد حزب اختلاف سندھ اسمبلی حلیم عادل شیخ حلیم گزشتہ ڈیڑھ ماہ سے دو مقدمات میں جیل میں تھے۔ ان پر گھوٹکی الیکشن کا پرانہ مقدمہ بھی گرفتاری کے بعد ظاہر کیا گیا جس میں بھی حلیم عادل شیخ دو روز قبل ضمانت منظور ہوئی تھی۔ سندھ حکومت کی کرپشن کے بے نقاب کرنے کے جرم میں حلیم عادل شیخ کو سیاسی انتقام کا نشانہ بناتے ہوئے سندھ حکومت نے جھوٹے مقدمات بنائے تھے۔

رہائی کے بعد قائد حزب اختلاف حلیم عادل شیخ اپنے کارکنان سے ملنے جیل پہنچےسیاسی کیس میں چار کارکنان جیل میں ہیں ان سے ملاقات کی جس کے بعد گھر پہنچے۔

جناح اسپتال میں رہائی کے بعد قائد حزب اختلاف سندھ اسمبلی حلیم عادل شیخ نے کہا کہ شکریہ مراد علی شاہ! جنہوں نے مجھے ڈیڑھ ماہ میں سیاسی دہشت گرد بنا کر پیش کیا، ڈیڑھ ماہ میں سندھ حکومت کا سیاسی انتقام ایکسپوز ہوچکا ہے۔اپوزیشن لیڈر حلیم عادل شیخ کا مزید کہنا تھا کہ ثابت ہوا سندھ میں سیاسی مقدمات بنائے جاتے ہیں۔ میری آواز بند کرنے کی بار بار کوشش کی گئی لیکن ناکامی ان کا مقدر بنی ہے۔ کل بھی عوام کی آواز بنا آج بھی عوام کی آواز بنوں گا۔ اپوزیشن لیڈر کی آفیس میں عوامی شکایاتی سیل قائم کریں گے جس سے سندھ کی عوام کے مسائل اجاگر کریں گے۔ حلیم عادل شیخ رہائی پر اپنے قائد عمران خان سمیت پارٹی کے رہنمائوں کارکنوں اور ہمدردوں کا شکریہ ادا کیا۔

اس موقعہ پر حلیم عادل شیخ کے بڑے بھائی سابقہ رکن سندھ اسمبلی علیم عادل شیخ نے میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا حلیم عادل شیخ عمران خان کا سچا سپاہی مخالفین نے آواز بند کرنے کی کوشش کی اور قید کروایا آج حلیم عادل شیخ سرخرو ہوکر نکلے ہیں۔ رسوائی مخالفین کو ملی ہے۔ اس موقعہ پر پی ٹی آئی رکن سندھ اسمبلی دعا بھٹو پی ٹی آئی رہنما نعیم عادل شیخ، علی میرجت سمیت دیگر بھی موجود تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں