طرف موت ہی موت،، ہر طرف ویرانی ہی ویرانی،،، بھوک پیاس ننھے ذی روحوں کو نوچنے لگی، جنگ زدہ غزہ کے در و دیوار نوحہ کناں، بھو ک و پیاس سے لمحہ لمحہ تڑپ تڑپ کر موت کے منہ میں جاتے ننھے پھول،،، دم گھٹتی زندگی میں سسکتی انسانیت پر رو پڑ ا آسمان

ہر طرف موت ہی موت،، ہر طرف ویرانی ہی ویرانی،،، بھوک پیاس ننھے ذی روحوں کو نوچنے لگی، جنگ زدہ غزہ کے در و دیوار نوحہ کناں، بھو ک و پیاس سے لمحہ لمحہ تڑپ تڑپ کر موت کے منہ میں جاتے ننھے پھول،،، دم گھٹتی زندگی میں سسکتی انسانیت پر رو پڑ ا آسمان،،،

غزہ میں اسرائیلی فوج کے بارود کی برسات کے تلے بھوک و افلاس کے ڈیرے ،، ننھی جانیں تڑپتے بلکتے موت کو گلے لگانے لگیں، ہائے ان ماؤں کا غم۔۔ جن کے جگر گو شے ان کی آنکھوں کے سامنے موت کی آغوش میں سو گئے، بھوک سے جان سے جانے والے بچوں کی تعداد سینتیس ہو گئی ،،،

دوسری جانب اسرائیلی فوج کی جانب سے مسلسل بمباری سے شہر بھی کھنڈرات میں تبدیل ہو چکا ہے، مگر عالمی برادری کا ضمیر بلکتی ننھی جانوں کی آوازوں پر بھی جاگ نہ سکا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں