21

سابق وزیر اعظم شاھد خاقان عباسی کے ریفرنس میں بیرسٹر ظفراللہ ناراض ہوکر احتساب عدالت سے چلے گئے جج نے واپس بلوایا

سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی احتساب عدالت کے باہر میڈیا سے گفتگو

احتساب کا عمل جو جاری ہے اس کا حال آپ دیکھ سکتے ہیں

تین احتساب عدالتیں ہیں یہاں دو ہی کیسز میں سزا دی گئی

دو کیسز میں میاں محمد نوازشریف کو بس سزا دی گئی

نیب چئیرمین خود سپریم کورٹ کے جج رہ چکے ہیں

چئیرمین نیب خود یہاں آکر دیکھ لیں عدالتوں کا حال کیا ہے

وزیراعظم کا مشکور ہوں جنہوں نے کہا حکمران کرپٹ ہوں تو ملک تباہ ہو جاتا ہے

پاکستان کی کرپٹ ترین حکومت آج پنجاب اور وفاق میں ہے

رنگ روڑ، دوائیوں ، چینی، گندم میں وزیر اور مشیر پیسے کھا گئے

جس وزیراعظم کے نیچے یہ سب ہوا وہ پارسائی کا دعویدار ہے

اسلام آباد سے حکومت کا ایک اور اسکینڈل سامنے آئے گا،

ایل این جی ریفرنس

سابق وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اور دیگر کے خلاف ایل این جی ریفرنس کی سماعت

ریفرنس پر سماعت احتساب عدالت کے جج اعظم خان کر رہے ہیں

شاہد خاقان عباسی اور دیگر ملزمان عدالت میں پیش، سماعت کے آغاز پر حاضری لگائی گئی

نیب کے گواہ عبدالرشید جوکھیو پر جرح مکمل کر لی ہے، بیرسٹر ظفر اللہ وکیل شاہد خاقان عباسی

نیب کے گواہ سید ساجد رضا کا بیان قلمبند ہونا شروع

گواہ کا بیان قلمبند ہونے سے قبل حلف لیا گیا

نیب کے گواہ سید ساجد رضا کا بیان قلمبند کیا جا رہا ہے
فیئر ٹرائل کا تقاضا ہے کہ وکیل صفائی کے پاس مکمل دستاویزات ہوں اور وہ انہیں پڑھ کر آئے، جج احتساب عدالت

ریفرنس کی نقول تفتیشی افسر نے تیار کروائیں، انہیں بلا کر پوچھ لیں، نیب پراسیکیوٹر

اگر یہ غلطی ہوئی ہے تو تفتیشی افسر کی ہے، جج احتساب عدالت محمد اعظم خان

احتساب عدالت نے تفتیشی افسر کو آج ہی طلب کر لیا
ہمارا حق تھا مکمل ریفرنس دیا جائے لیکن اب بھی کاپیاں مکمل نہیں، بیرسٹر ظفر اللہ

جب بھی بیٹھ کر پڑھنے لگتے ہیں پتہ چلتا ہے فلاں دستاویز ہے ہی نہیں، بیرسٹر ظفراللہ

اتنی فوٹو کاپیاں کروا کر ہمارا بجٹ بھی آوٹ ہوجاتا ہے، جج اعظم خان

پیسے ہم سے لے لیں لیکن ہمیں کاپیاں مکمل دیں، بیرسٹر ظفر اللہ

میں اس مسئلے کو سپریم کورٹ تک لے کر جاؤں گا، بیرسٹر ظفر اللہ

تیس سال کی پریکٹس میں ایسا کبھی نہیں دیکھا، بیرسٹر ظفر اللہ

بیرسٹر ظفر اللہ کمرہ عدالت چھوڑ کر چلے گئے، جج اعظم خان نے واپس بلایا

عدالت کی نیب کو آج بیرسٹر ظفر اللہ کے اعتراضات دور کرنے کی ہدایت

سید ساجد رضا ، چیف منیجر سکیڈا ڈسٹریبیوشن سوئی سدرن گیس کا بطور گواہ بیان

2010 سے 2019 تک کا گیس ڈیمانڈ اور سپلائی چارٹ تفتیشی کو فراہم کیا تھا، گواہ

چارٹ میں نے خود تیار کر کے نیب کو فراہم کیا تھا دستخط بھی میرے ہی ہیں، گواہ

نیب کے گواہ سید ساجد رضا کا بیان قلمبند کر لیا گیا

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں