27

مریم نواز کی گرفتاری لاہور ہائی کورٹ نے نیب کو پابند کردیا

نیب نے مریم نواز کو گرفتار کرنا ہو تو 10روز پہلے آگاہ کرے،لاہور ہائی کورٹ

عدالت نے مریم نواز کی جاتی ا مراء اراضی الاٹمنٹ کیس میں عبوری ضمانت کی درخواست نمٹا دی

لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس سردار محمد سرفراز ڈوگر اور جسٹس اسجد جاوید گھرال پر مشتمل دو رکنی بینچ نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز شریف کی جاتی ا مراء اراضی الاٹمنٹ کیس میں عبوری ضمانت کے حوالہ سے دائر درخواست ضمانت نمٹا دی۔ عدالت نے نیب اسپیشل پراسکیوٹر فیصل بخاری کی جانب سے اس بیان پر کہ نیب کی جانب سے مریم نواز شریف کے وارنٹ گرفتاری جاری نہیں کئے گئے اور نہ ہی نیب نے مریم نواز کو گرفتار کرنے کا فیصلہ کیا ہے پر مریم نواز کی   درخواست ضمانت نمٹا دی۔عدالت نے حکم دیا ہے کہ اگر نیب نے مریم نواز کو گرفتار کرنا ہو تو 10روز پہلے آگاہ کرے۔ عبوری ضمانت ختم ہونے پر مریم نواز شریف اپنے وکلاء سینیٹر چوہدری اعظم نذیر تارڑ اور محمد امجد پرویز ایڈووکیٹ کے ہمراہ عدالت میں پیش ہوئیں۔ اس موقع پر (ن)لیگ پنجاب کے صدر رانا ثناء اللہ خان، (ن)لیگ کی ترجمان مریم اورنگزیب ، (ن)لیگ لاہور کے صدر رکن پنجاب اسمبلی ملک سیف الملوک کھوکھر، کیپٹن (ر)محمد صفدر اور دیگر (ن)لیگی رہنما بھی مریم نواز کے ہمراہ تھے۔ دوران سماعت نیب کے اسپیشل پراسیکیوٹر فیصل  بخاری عدالت میں پیش ہوئے۔ نیب وکیل کا کہنا تھا کہ نیب نے مریم نواز کی درخواست ضمانت پر اپنا جواب جمع کروادیا ہے۔ عدالت نے استفسار کیا کہ کیا مریم نواز کی گرفتاری کے لئے وارنٹ گرفتاری جاری کئے گئے؟اس پر نیب وکیل نے عدالت کو بتایا کہ نیب کی جانب سے مریم نواز کی گرفتار ی کے لئے وارنٹ گرفتاری جاری نہیں کئے گئے۔  جبکہ مریم نواز کے وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ اگر نیب نے مریم نواز کو گرفتار کرنا ہو تو پہلے آگاہ کرے تاکہ وہ عدالت سے رجوع کرسکیں۔واضح رہے کہ مریم نواز کی جانب سے دائر درخواست ضمانت میں مئوقف اختیار کیا ہے کہ نیب کی جانب سے غیر قانونی اقدامات کئے  جارہے ہیں، حکومت کے کہنے پر نیب ان کو گرفتار کرنا چاہتا ہے ، حالانکہ جاتی امراء اراضی کیس سے ان کا کوئی تعلق نہیں ہے، انکوائری میں شا مل تفتیش ہونا چاہتی ہوں مگر گرفتاری کا خدشہ ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں