33

بھارت کے ساتھ تجارت کی منسوخی خوش آئند بنیادی مسئلے کو نظر انداز کرکے بھارت کے ساتھ تعلقات استوار کرنا انتہائی نقصان دہ تھا حزب المجاہدین کے سربراہ سید صلاح الدین احمد

مظفر آباد

حکومت پاکستان کی طرف سے بھارت کے ساتھ تجارت کی منسوخی خوش آئندہ

بنیادی مسئلے کو نظر انداز کرکے بھارت کے ساتھ تعلقات استوار کرنا انتہائی نقصان دہ۔

ان خیالات کا اظہار حزب المجاہدین کے سربراہ اور متحدہ جہاد کونسل کے چیئر مین سید صلاح الدین احمد نے پریس کے نام جاری اپنے ایک بیان میں کیا ہے۔انہوں نے کہا کہ سات دہائیوں سے پاک بھارت تعلقات میں مسئلہ کشمیر کو مرکزی اہمیت اور حیثیت حاصل رہی ہے۔اس بنیادی مسئلے کو نظر انداز کرکے وقتی طور پر سرد خانے میں ڈال کر بھارت کے ساتھ تعلقات استوار کرنا پاکستان کیلئے بہت ہی نقصان دہ اور پچھتاوے کا باعث ہوگا۔مودی سرکار نے تمام عالمی قوانین،قرادادیں اور اخلاقی ضابطوں کو بلڈوز کرتے ہوئے مقبوضہ ریاست کو ہڑپ کرنے کی جو جارحانہ اور ظالمانہ کاروائی کی ہے اور وہاں کے مظلوم اور نہتے عوام کو گذشتہ 19مہینوں سے 9لاکھ درندہ صفت فوجیوں کے نرغے میں پابہ زنجیر کرکے بھوک اور پیاس سے بدحال کرنے ہر ممکنہ کو ششیں کی ہیں اس کا ہر محاذ پر توڑ کرناحکومت پاکستان کی پہلی ترجیح اور ہمہ وقت پالیسی ہونی چائیے۔سید صلاح الدین نے واضح کیا کہ سفارتی و تجارتی تعلقات کی بحالی اس قابض کے ساتھ ممکن ہی نہیں جس نے کشمیریوں کو روز و شب اپنے ہی خون میں نہلانے کا بازار گرم کر رکھا ہے ۔ بہر حال پاکستانی حکومت کا حقائق کا اعتراف اور اس پر فوری عملدرامد خوش آئند اقدام ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں