68

ممتاز صحافی دفاعی تجزیہ نگار سہیل عبدالناصر کو ایبٹ آباد میں آبائی قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا وہ کورونا کا شکار ہو کر آج اسلام آباد میں شہید ہوگئے تھے

سینئر صحافی اورنوائے وقت کے سینئر رپورٹر سہیل عبدالناصر کورونا کے باعث انتقال کر گئے، انہیں آج نمازہ جنازہ کے بعد آبائی قبرستاسان میں سپرد خاک کر دیا گیا، نماز جنازہ میں صحافیوں اور اہل علاقہ کی کثیر تعداد نے شرکت کی،سینیٹر شبلی فراز،وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی ،وزیر ریلوے شیخ رشید احمد،مریم اورنگزیب سمیت اہم سیاسی و سماجی شخصیات نے سہیل عبدالناصر کی وفات پر اظہار تعزیت کیا ہے، مرحوم نے پسماندگان میں بیوہ اور تین کم سن بچے چھوڑے ہیں،مرحوم گزشتہ تین دہائیوں سے نوائے وقت کے ساتھ وابستہ تھے ،انہوں نے پشاور یو نیورسٹی سے پبلک ایڈمنسٹریشن ایم اے کیااور نوائے وقت کے ساتھ بطور سب ایڈیٹر وابستہ ہو گئے جس کے بعد انہیں رپورٹنگ کی ذمہ داریاں سونپی گئیں جسے انہوں نے کما حقہ ادا کیا وہ دفاعی اور خارجہ امور پر دسترس رکھتے تھے انہیں یہ اعزاز بھی حاصل ہے کہ پاکستان کے ایٹمی دھماکے کر نے کی خبر سب سے پہلے انہوں نے نوائے وقت میں شائع کی جبکہ ایٹمی سائنس دان ڈاکٹر عبدالقدیر خان کا تاریخی انٹرویو بھی کیا، وہ افغان امور کے بھی ماہر سمجھے جاتے تھے،وہ ایک دیانتدار صحافی اور اپنے پیشے سے کمٹمنٹ رکھنے والے انسان تھے ،صحافتی برادری میں ان کی خدمات کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا،وہ گزشتہ پندرہ روز سے پمز ہسپتال میں داخل تھے،ملک کی نامورسیاسی ،صحافتی و سماجی شخصیات اور رہنماوں نے سینئر صحافی سہیل عبدالناصر کی وفات پر دلی رنج وغم اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ان کی صحافتی خدمات کو شاندار الفاظ میں خراج عقیدت پیش کیا ہے۔ جمعہ کو اپنے تعزیتی پیغام میں سینیٹر شبلی فراز سہیل عبدالناصر کے انتقال پر رنج و غم اور افسوس کا اظہارکیا،انہوں نے کہا کہ سہیل عبدالناصر پیشہ وارانہ اصولوں پر کاربند صحافی تھے،وہ ذاتی طور انتہائی کھرے کردار کے مالک شخص تھے، شعبہ صحافت میں انکی خدمات تادیر یاد رکھی جائیں گی،اللہ تعالی مرحوم کو جوار رحمت میں جگہ عطا فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل دے۔آمین،وزیر خارجہ شاہ محمود نے کہا کہ سہیل عبدالناصر ایک منجھے ہوئے صحافی تھے ،صحافت کے شعبے میں سہیل عبدالناصر کی خدمات کو تادیر یاد رکھا جائے گا انہوں نے سہیل عبدالناصر مرحوم کے لواحقین کے ساتھ اظہار تعزیت کیااور مرحوم کی مغفرت اور بلندی درجات کیلئے دعاکی، مسلم لیگ (ن)کی ترجمان مریم اور نگزیب نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ سہیل عبدالناصر ایک کھرے، صاف گو اور شفاف کردار کے صحافی تھے۔ ان کی وفات بڑے دکھ کا باعث اور معیاری صحافت کا نقصان ہے۔ مسلم لیگ(ن)ے سینیٹر عرفان صدیقی نے سینئر صحافی سہیل عبدالناصر کی وفات پر رنج و غم اور افسوس کا اظہارکرتے ہوئے کہاکہ یہ ذمہ دارانہ صحافت کا ایک بڑا نقصان ہے۔ سابق وفاقی وزیر اطلاعات اور پاکستان مسلم لیگ فنکشنل کے جنرل سیکریٹری محمد علی درانی نے کہاکہ سہیل عبدالناصر نہ صرف ایک بہترین صحافی تھے بلکہ وہ ایک بہت نیک اور اچھے انسان بھی تھے۔ کم گوئی لیکن علمی گفتگو ان کا خاصا تھا۔ پاکستان مسلم لیگ (ن)خیبرپختونخوا کے صدر انجینئر امیر مقام، سابق صوبائی وزیر چوہدری عبدالغفور، ممتاز سماجی سیاسی شخصیت شاہد گیلانی سمیت زندگی کے مختلف شعبہ جات سے تعلق رکھنے والے افراد نے بھی سہیل عبدالناصر کے انتقال پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے دعا کی کہ اللہ تعالی مرحوم کو جنت الفردوس میں اعلی مقام عطا فرمائے اور لواحقین کو صبر جمیل دے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں