54

پنجاب کے نیب زدہ وزیر کی ہاوسنگ سوسائٹی کے لئے جعلسازیاں جاری

اسلام آباد:اسلام آباد ماڈل ٹاون کی ایل اوپی کے خلاف سی ڈی اے کو درجنوں درخواستیں موصول

درخواستیں مقامی مالکان کی جانب سے دی گئی

درخواستوں کے ساتھ اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ کے سی ای او کی جعل سازی کے ثبوت فراہم کیئے گئے

درخواستوں پر عمل درآمد نا کرنےکے صورت میں مقامی مالکان کا احتجاج اور دھرنے کا فیصلہ

اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ نے سی ڈی اے میں این او سی کی درخواست دینے کے بعد جون 2019 میں مزکورہ رقبہ 332 کنال فروخت کر دیا تھا

اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ نے این او سی کے حصول کے لیئے شاملاتی خسرہ جات اور برساتی نالے کے خسرہ نمبروں کا اندراج کیا تھا

مزکورہ رقبہ پارک ویو سوسائیٹی کو بزریعہ انتقال نمبر6186 مورخہ 26 جون 2019 کوفروخت کیا گیا تھا

اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ نے رقبہ فروخت کرنے کے 4 ماہ بعد سی ڈی اے افسران کی ملی بھگت سے ایل او پی ایشو کروا لی

ایل او پی اکتوبر 2019 میں سی ڈی اے کی جانب سے ایشو کی گئی

2019 میں سی ڈی اے کی جانب سے ایل او پی جاری کیئے جانے کے خلاف مقامی مالکان نے متعدد درخواستیں بھی دائر کی تھی

مقامی مالکان نے چئیرمین سی ڈی اے، ممبر پلاننگ، ڈی جی پلاننگ، ڈائریکٹر پلاننگ کو درخواستیں دی

درخواستیں دینے کے باوجود افسران کی جانب سے مبینہ طور پر کوئی کاروائی نا کی گئی

اے ڈی سی آر کی عدالت سے مقامی مالکان کے حق میں خسرہ گراداوری درست کرنے کا فیصلہ آیا تھا

اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ نے2019 میں پٹواری جمشید کی ملی بھگت سے خسرہ گرداوری تبدیل کروائی تھی

فیصلے میں پٹواری کو معطل کر کے اس کے خلاف انکوائری کا حکم دیا گیا ہے

1992 میں خسرہ گراداوری تبدیل کرنے پر ایف آئی اے میں پہلے بھی کیس کا اندراج کیا گیا تھا

اس بابت 28 جنوری کو قبضہ کی کوشش میں مزکورہ زمین پر قبضے کی غرض سے حملے میں ایک شخص جانبحق اور ایک شدید زخمی ہوا

دائر درخواستوں پر عمل درآمد کی غرض سے مقامی مالکان کو آج مورخہ 15 مارچ طلب کیا گیا ہے

مقامی مالکان قتل کے واقعے پر احتجاج کے دوران اسلام آباد ماڈل ٹاون کو سیل کرنے اور ایل او پی کینسل کرنے کا مطالبہ بھی کیا تھا

ایم این اے خرم نواز ، ایس ایس پی آپریشن ، اور اسسٹنٹ کمشنر نے مطالبات کو تسلیم کر کے عمل درآمد کا وعدہ بھی کیا تھا

سی ڈی اے کو جعل سازی سے حاصل کی گئی اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ کی ایل او پی خلاف متعدد درخواستیں دی تھی، مقامی مالک نصیر شاہ

سی ڈی اے میں موجود کرپٹ افسران نے ایل او پی جاری کی، نصیر شاہ

رقبہ جون 2018 میں فروخت ہوا جبکہ 4 ماہ بعد اکتوبر 2018 میں ایل او پی کس قانون کے تحت جاری کی گئی، نصیر شاہ

این او سی میں درج خسرہ جات ہمارہ مالکیتی اور مقبوضہ ہیں، تصدق شاہ

اشتہار میں جعل سازی سے اسلام آباد ماڈل ٹاون کے خسرہ جات دکھائے گئے، تصدق شاہ

اشتہاربکی بابت سی ڈی اے کے اعلی افسران کو متعدد درخواستیں دی لیکن سب کو ردی کی ٹوکری کی نظر کر دیا گیا، تصدق شاہ

مزکورہ زمین کی خسرہ گراداوی کا فیصلہ ، ملکیتی زمین کے ثبوت کے ساتھ جعل سازی کے تمام ثبوت درخواست کے ساتھ لف ہیں، جہانگیر شاہ

ڈائریکٹر پلاننگ ارشد چوہان، پٹواری تنویر نے ایل او پی دینے سے پہلے مبینہ طور پر نا لینڈ سے اور نا موقع پر آنا گوارہ کیا، جہانگیر شاہ

سی ڈی اے کی مبینہ نااہلی کی باعث قیمتی جانوں کا نقصان اٹھانا پڑا، جہانگیر شاہ

سی ڈی اے نے مزکورہ افسران کو معطل کر کے ایل او پی کینسل نا کی سی ڈی اے سامنے احتجاج اور دھرنا دیں گئے، جہانگیر شاہ

اسلام آباد ماڈل پراجیکٹ کے سی ای او کے خلاف تھانہ بنی گالہ میں قتل اور قبضے کے مقدمات درج ہیں، صغیر شاہ

مدینہ کی ریاست کے حاکم کی رہائش گاہ سے چند فرلانگ پر یزیدیت کا بازار گرم ہے، صغیر شاہ

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں